Home / Uncategorized / A Doubt ??

A Doubt ??

What to say about this?


پاکستان پر ایک گنھی داڑھی اور سبز آنکھوں والے کی حکومت ہو گی



****************************************
اردو کے مشہور ادیب اور افسانہ نگار ممتاز مفتی نے اپنی آپ بیتی الکھ نگری میں کراچی کی ایک پڑھی لکھی خاتون عطیہ نامی کا ذکر کیا ہے جس سے ان کا تعارف ایوب خان کی حکومت کے ابتدائی دور (جب کراچی پاکستان کا دارالحکومت ہوتا تھا )میں قدرت الله شہاب کے ذریعے ہوا تھا- عطیہ ایک مستقبل بین خاتون تھیں -عطیہ کی مستقبل بینی کے متعلق الکھ نگری سے چند اقتباس ملاحظ ہوں .میں (ممتاز مفتی )نے کہا محترمہ آپ مستقبل کی جھلکیاں کیسے نظر آتی ہیں .وہ مسکرائی کہنے لگی کبھی محسوسات کے ذریعے جھلکی نظر آ جاتی ہے کبھی آنکھوں کے سامنے تصویر آ جاتی ہے کبھی آوازیں سنائی دیتی ہیں اور کبھی دیوار پر فلم چلنے لگتی ہے ………….میں ایک سیر ہوں معالج نہیں ہوں مجھے جو دیکھتا ہے بتا دیتی ہوں. یقین سے نہیں کہ سکتی کہ جو مستقبل میں یہ ہو گا-درست بھی ہے یا نہیں پھر وقت کے بارے میں کچھ نہیں کہ سکتی ایک چیز مجھے دیکھائی جاتی ہے کہ مستقبل میں یہ ہو گا یوں ہو گا-لیکن یہ نہیں پتا چلتا کہ کب ہو گا کل ہو گا یا دس سال کے بعد ہو گا عطیہ نے قدرت الله شہاب کو بتایا تھا کہ صدر ایوب خان کے خلاف سازش ہو رہی ہے-انہوں نے ان لوگوں کی نشاندہی کی جنہوں نے صدر ایوب خان کے خلاف سازش ہو رہی ہے -انہوں نے ان لوگوں کی نشاندہی کی جنہوں نے صدر ایوب خان کو زہر دیکر قتل کرنا تھا-یہ افراد پکڑے گے اور انہوں نے اپنے منصوبے کا اعتراف کیا –
ایک اور اقتباس ” عطیہ کہتی ہے کئی ایک باتیں میں دیر سے دیکھ رہی ہوں ،مسلسل دیکھ رہی ہوں
لیکن وہ وقوع پذیر نہیں ہوتیں.مثلا ؟……………….میں (ممتاز مفتی ) نے پوچھا –
مثلا وہ کیا ہیں تو عطیہ نے کہا
*********************************************************
میں کب سے دیکھ رہی ہوں کہ سہروردی کو گرفتار کر لیا گیا ہے (بعد میں ایسا ہی ہوا )- میں دیکھتی ہوں کہ ایک گنھی داڑھی والا شخص جس کی آنکھیں سبز ہیں ڈکٹیٹر بن کر آ رہا ہے جو بہت سخت گیر ہے اور ہمارے معاشرے کو سدھار کر رکھ دے گا……………میں دیکھ رہی ہوں کہ ایک خونی جنگ ہو گی -ایسٹ پاکستان ہاتھ سے نکل جائے گا-کشمیر ہمیں مل جائے گا-پاکستان کے علاقے میں وسعت ہو گئی .ہم دہلی پر قابض ہو جایئں گے عطیہ کی پیشنگویوں کا حصہ جو پاکستان کے لیے خوش خبری نہیں رکھتا وہ تو اب تک پورا ہو چکا ہے-یعنی جنگ بھی ہو گئی اور مشرقی پاکستان کا سقوط ہو گیا خون ریزی بھی ہو گئی –
*************************************************
یہ پیشن گوئی مشرقی پاکستان کی علیحدگی کے متعلق پیشن گوئی بلکہ ٹھیک ٹھیک پیشن گوئی علامہ مشرقی نے بھی کی تھی اور واضح الفاظ میں بتایا تہ کہ ١٩٧٠ کے اردگرد زمانے میں مشرقی پاکستان جدا ہو جائے گا بعض علما کو الله کی طرف سے ایسی فراست عطا کی جاتی ہے کہ وہ کم ازکم مستقبل قریب کے حالات کے متعلق بہت ٹھیک اندازہ لگا سکتے ہیں.علامہ مشرقی ،میں بھی فراست موجود تھی .-کراچی کی عطیہ نے یہ پیشنگوئی کی تھی بلکہ باطنی آنکھ سے دیکھا تھا کہ پاکستان پر ایک گھنی داڑھی اور سبز آنکھوں والے ڈکٹیٹر کی حکومت قائم ہو گئی جو حالات کو درست کرے گا اور کشمیر کے علاوہ دہلی بھی فتح ہو گا یہ پیشنگوئی کسی حد تک حضرت نعمت الله شاہ والی کی پیشن گوئی سے ملتی جلتی ہے اور ابھی تک پوری نہیں ہوئی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

x

Check Also

Post

Post Related